Breaking News
Home / کہانیاں / بھارتی فوجی ایک خاتون سے عشق معاشقے پر گرفتار ، سارے معاملے میں پاکستان کا ذکر کیوں کثرت سے ہونے لگا ؟ جانیے

بھارتی فوجی ایک خاتون سے عشق معاشقے پر گرفتار ، سارے معاملے میں پاکستان کا ذکر کیوں کثرت سے ہونے لگا ؟ جانیے

بھارتی فوجی ایک خاتون سے عشق معاشقے پر گرفتار ، سارے معاملے میں پاکستان کا ذکر کیوں کثرت سے ہونے لگا ؟ جانیے

انڈیا کی شمالی ریاست راجستھان میں حکام نے پاکستان کی خفیہ ایجنسی کی ایک مبینہ ایجنٹ کو خفیہ معلومات فراہم کرنے کے الزام میں ایک فوجی اہلکار کو گرفتار کیا ہے۔راجستھان کے ڈائریکٹر جنرل پولیس (انٹیلیجنس) اومیش مشرا نے بتایا ہے کہ راجستھان انٹیلیجنس ریاست میں پاکستانی خفیہ ایجنسی کی

مبینہ جاسوسی سرگرمیوں پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے۔ڈائریکٹر جنرل پولیس کا دعویٰ ہے کہ کچھ عرصہ قبل انھیں یہ پتہ چلا تھا کہ انڈین فوج کی انتہائی حساس ریجمنٹ میں کام کرنے والا پردیپ کمار نامی ایک اہلکار سوشل میڈیا کے ذریعے مبینہ طور پر پاکستانی خفیہ ایجنسی سے مسلسل رابطے میں تھے۔ان کا کہنا ہے کہ اس اطلاع کے بعد سی آئی ڈی انٹیلیجنس، جے پور کے ذریعے مذکورہ فوجی کی مسلسل نگرانی شروع کی گئی۔نگرانی کے دوران پتہ چلا کہ پردیپ کمار ایک خاتون ایجنٹ سے سوشل میڈیا کے توسط سے مسلسل رابطے میں ہے اور اسے اہم فوجی معلومات فراہم کر رہا ہے۔‘

پولیس کے مطابق 18 مئی کو مذکورہ فوجی کو حراست میں لے کر اس سے پوچھ گچھ شروع کر دی گئی ہے۔پولیس نے اپنے بیان کے ساتھ گرفتار ہونے والے فوجی اور مبینہ جاسوس کی تصاویر بھی شائع کی ہیں۔ذرائع کے مطابق جوائنٹ انوسٹیگیشن سینٹر، جے پور میں مختلف ایجنسیوں کی جانب سے پوچھ گچھ کے دوران 24 سالہ ملزم نے بتایا کہ وہ کرشنا نگر، اتراکھنڈ کا رہائشی ہے اور تین برس قبل انڈین فوج میں بھرتی ہوا تھاجس کے بعد ملزم کا تبادلہ جودھ پور میں انتہائی حساس ریجمنٹ میں ہوا تھا۔

تقریباً چھ، سات مہینے قبل ملزم کے موبائل پر ایک خاتون کی کال آئی جس کے بعد دونوں وٹس ایپ، وائس کال اور ویڈیو کال کے ذریعے آپس میں بات کرنے لگے۔پولیس کے مطابق چھدم نامی خاتون نے خود کو گوالیار، مدھیہ پردیش کی رہنے والی اور بنگلور میں ایم این ایس میں تعینات بتایا۔پولیس کا دعویٰ ہے کہ مذکورہ خاتون نے ملزم کو اپنے دام میں پھنسایا اور دلی آکر ملنے اور شادی کرنے کا وعدہ کیا۔پولیس کا دعویٰ ہے کہ اس کے بعد خاتون نے کئی خفیہ دستاویز اور تصاویر مانگنا شروع کیں،

جس پر ملزم نے ’ہنی ٹریپ میں پھنس کر اپنے دفتر سے فوج سے متعلق خفیہ دستاویزات کی فوٹو چوری چھپے اپنے موبائل سے کھینچ کر خاتون کو بھیجنا شروع کر دیں۔‘پولیس کا دعویٰ ہے کہ ملزم کے فون کی تحقیقات سے ان حقائق کی تصدیق ہونے کے بعد ملزم کے خلاف سرکاری رازداری قانون 1923 کے تحت مقدمہ درج کرنے کے بعد اسے گرفتار کیا گیا۔ پولیس کا دعویٰ ہے کہ ملزم نے تفتیش کے دوران بتایا کہ ’اس نے مذکورہ خاتون کے کہنے پر اپنے موبائل کی سِم اور موبائل نمبر اور وٹس ایپ کے لیے او ٹی پی بھی شیئر کیا جس کی وجہ سے خاتون ایجنٹ دیگر لوگوں کو اور فوجیوں کو بھی اپنا شکار بنا سکتی ہے۔‘

Share

About admin

Check Also

اولینا زیلنسکا دراصل کون ہیں؟

اولینا زیلنسکا دراصل کون ہیں؟ کیف (ویب ڈیسک) بہت سے لوگوں کی دلچسپی یوکرینی صدر …

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Powered by themekiller.com