Breaking News
Home / اہم خبریں / ابھی تو پارٹی شروع ہوئی ہے15 دن بعد پٹرولیم مصنوعات میں پھر کتنا اضافہ ہوگا؟؟حقائق جان کر آپ بھی سر پکڑ لینگے

ابھی تو پارٹی شروع ہوئی ہے15 دن بعد پٹرولیم مصنوعات میں پھر کتنا اضافہ ہوگا؟؟حقائق جان کر آپ بھی سر پکڑ لینگے

ابھی تو پارٹی شروع ہوئی ہے15 دن بعد پٹرولیم مصنوعات میں پھر کتنا اضافہ ہوگا؟؟حقائق جان کر آپ بھی سر پکڑ لینگے

اسلام آباد (ویب ڈیسک) حکومت کے لیے آئی ایم ایف پروگرام کا حصول مشکل ہو گیا، عالمی مالیاتی ادارے سے قرض لینے کے لیے آئندہ 15 دنوں میں اسی شرح سے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھانا ہوں گی۔ تفصیلات کے مطابق پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کیا جانے والا تازہ ترین اضافہ کافی نہیں ہے،

اگلے پندرہ دن بعد حکومت کو اسی شرح سے اگلا اضافہ کرنا ہوگا۔ اسی طرح اگر حکومت نے پٹرولیم مصنوعات پر سبسڈی ختم نہ کی تو اسے ماہانہ 120 ارب روپے کا نقصان اٹھانا پڑے گا جو وفاقی حکومت کے اخراجات سے بھی زیادہ ہے جو صرف 85 ارب روپے تک ہیں۔ موجودہ حکومت نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھانے کا کڑوا گھونٹ آئی ایم ایف پروگرام بحال کرنے کیلئے پیا تاکہ 900 ملین ڈالرز کی قسط جاری ہو سکے،

اگر آئی ایم ایف نے رضامندی کا اظہار کیا تو سعودی عرب تین ارب ڈالرز کے قرضہ جات کی ادائیگی میں سہولت دے گا، چین بھی پاکستان کو مالی معاونت فراہم کرے گا جبکہ امریکا بھی یہی اقدامات اٹھائے گا۔دوسری جانب ایک خبر کے مطابق پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کر دیا گیا، درخواست میں اوگرا ،وفاقی حکومت سمیت دیگر کو فریق بنایا گیا ہے۔

ایڈووکیٹ اظہر صدیق کی جانب سے دائر کی گئی درخواست میں موقف اپنایا گیا ہے کہ حکومت نے کابینہ کی منظوری کی بغیر پٹرول کی قیمتوں میں اضافہ کیا۔ درخواست گزارکا مزید کہنا تھا کہ حکومتی اقدام غیر قانونی ہے، درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ عدالت پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کالعدم قرار دے۔دوسری جانب ایک خبر کے مطابق حکومت نے عوام پر پٹرول بم گرادیا ہے۔

حکومت نے پٹرولیم مصنوعات میں اضافے کا اعلان کردیا ہے۔ پٹرول کی قیمت 30 روپے بڑھائی گئی ہے۔ وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے اسلام آباد میں نیوز کانفرنس میں کہا کہ حکومت پٹرول، ڈیزل اور کیروسین آئل 30روپے مہنگی کرنے جا رہی ہے۔ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا اطلاق آج رات 12 بجے سے ہوگا۔ پٹرول کی نئی قیمت 179.86، ڈیزل کی 174.15 ،لائٹ ڈیزل 148.31 روپے اور مٹی کے تیل کی نئی قیمت 155.56 روپے ہوگی ۔ مفتاح اسماعیل کا کہنا ہے کہ شہبازشریف کا پٹرول برھانے کا فیصلہ ایک مشکل فیصلہ ہے ۔ یہ کہاں کا انصاف ہے کہ غریبوں پر بوجھ ڈال دیں۔ عمران خان کی حکومت جانے لگی تو پٹرول بم ہمارے لیے چھوڑ دیا۔

وزیر خزانہ کا کہنا ہے کہ عمران خان کے فارمولا پر جاوں تو پیٹرول205روپے لیٹر ہو جائے گا۔ آئی ایم ایف نے پیٹرول کی قیمت بڑھانے تک ریلیف سے انکار کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ عوام پر کسی بھی قسم کا بوجھ ڈالنا ہمارے لیے مشکل فیصلہ تھا۔ سابق حکومت نے پیٹرول اور ڈیزل کی قیمت کو فکس کیا۔ سابق حکومت کی پالیسیوں کے باعث آج مشکلات کا سامنا ہے۔) پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کر دیا گیا، درخواست میں اوگرا ،وفاقی حکومت سمیت دیگر کو فریق بنایا گیا ہے۔ ایڈووکیٹ اظہر صدیق کی جانب سے دائر کی گئی درخواست میں موقف اپنایا گیا ہے کہ حکومت نے کابینہ کی منظوری کی بغیر پٹرول کی قیمتوں میں اضافہ کیا۔

Share

About admin

Check Also

ایک گھنٹے کا سفر 10 منٹ میں طے. یہ منصوبہ پاکستان کے کس شہر میں تیار ہو گا جانیے

ایک گھنٹے کا سفر 10 منٹ میں طے. یہ منصوبہ پاکستان کے کس شہر میں …

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Powered by themekiller.com