Breaking News
Home / آرٹیکلز / ایک سے زائد شادیوں کے خواہشمند غلط فہمی کا شکار!!! معروف سکالر نے مردوں کو خبردار کر دیا

ایک سے زائد شادیوں کے خواہشمند غلط فہمی کا شکار!!! معروف سکالر نے مردوں کو خبردار کر دیا

ایک سے زائد شادیوں کے خواہشمند غلط فہمی کا شکار!!! معروف سکالر نے مردوں کو خبردار کر دیا

قاہرہ: (ویب ڈیسک) مصر کی عالمی شہرت یافتہ درس گاہ جامعہ الازہر کے شیخ ڈاکٹر احمد الطیب نے خبردار کیا کہ مرد ایک بیوی پر اکتفا کریں کیوں کہ اکثر دوسری شادی، بیوی اور بچوں پر ظلم کا باعث بنتی ہے۔ عرب میڈیا کے مطابق مصری دارالحکومت میں ایک چینل کو انٹرویو میں شیخ الجامعہ ڈاکٹر احمد الطیب نے کہا کہ ایک سے زائد شادی سے متعلق آیات کو اس کے حقیقی تناظر میں انتہائی تدبر کے ساتھ پڑھنا اور سمجھنا چاہیے۔

ڈاکٹر احمد الطیب کا مزید کہنا تھا کہ ایک سے زائد شادی کے قائل افراد شدید غلط فہمی کا شکار ہیں۔ ایک بیوی کی موجودگی میں دوسری شادی کی آزادی نہیں البتہ صرف ٹھوس وجوہات پر ہی مشروط اجازت دی سکتی ہے۔ تاہم انھوں نے یہ وضاحت بھی دی کہ دوسری شادی کرنا شرعی حق ہے، نہ تو میں اسے حرام قرار دے رہا ہوں اور نہ پابندی عائد کرنا چاہ رہا ہوں تاہم اس شرعی حق کو غلط انداز میں استعمال کرنے کے شدید خلاف ہوں۔

شیخ جامعہ الازہر ڈاکٹر احمد الطیب کا مزید کہنا تھا کہ دوسری شادی اکثر بیوی اور بچوں پر ظلم کا باعث بنتی ہیں اس لیے ایک سے زائد شادی کے شرعی حق کے غلط استعمال کے حق کو روکنا ہوگا۔ دوسری جانب ایک سے زائد شادیوں کی صورت میں انصاف کر پانا انسانوں کے بس کی بات نہیں، جس سے ذہنی پریشانی اور دیگر مسائل جنم لیتے ہیں۔ کچھ لوگ اسے پریشان حال خواتین کے مسائل کا حل قرار دیتے ہیں۔ کچھ لوگوں کے نزدیک اگر ہر شخص چار شادیاں کر لے،

تو تمام خواتین کو ایک مرد سرپرست مل جائے گا، جو انہیں سپورٹ کرے، ان کی حفاظت کرے۔ لیکن ایک سے زائد شادیوں کی حقیقت نہ اتنی سادہ ہے، اور نہ ہی اتنی ستھری۔ گذشتہ ہفتے امارات کے ایک صفِ اول کے جریدے دی نیشنل نے ایک ریسرچ کے بارے میں خبر شائع کی، جس کے مطابق زیادہ شادیوں کی وجہ سے خواتین کی ذہنی صحت کو نقصان پہنچتا ہے، ان میں منفی جذبات پروان چڑھتے ہیں،

اور جس کی وجہ سے ان کی صحت مند اور جذبات سے بھرپور زندگی ان سے چھن جاتی ہے۔ امریکن یونیورسٹی آف شارجہ کی انگلش کی پروفیسر ڈاکٹر رعنا رداوی نے 100 ایسی عرب خواتین کا سروے کیا، جن کے شوہروں نے ایک سے زیادہ شادیاں کر رکھی تھیں۔ سروے کے نتائج کے مطابق ان میں سے کئی خواتین نظرانداز کیے جانے پر افسردہ، اور حسد کا شکار تھیں، جس سے ان کی زندگی اور ذہنی صحت کو نقصان پہنچا تھا۔ اپنے خاندان میں موجود کئی ایسی خواتین کو دیکھ کر انہوں نے ایک سے زائد شادیوں کے جذباتی نتائج پر تحقیق کرنے کا فیصلہ کیا، جو ان کے نزدیک اس سے پہلے کسی تحقیق میں نہیں کیا گیا۔

Share

About admin

Check Also

اللہ تعالیٰ کا یہ نام 11 بار پڑھ کرپرندوں کو کھِلانے سے انشاءاللہ آپ کا رزق کبھی ختم نہیں ہوگا

اللہ تعالیٰ کا یہ نام 11 بار پڑھ کرپرندوں کو کھِلانے سے انشاءاللہ آپ کا …

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Powered by themekiller.com