Breaking News
Home / اہم خبریں / بریکنگ نیوز: منہ میں کچھ دل میں کچھ اور ۔۔۔۔!!! ترکی نے اسرائیل کے معاملے پر امت مسلمہ اور دنیا کو تہلکہ خیز سرپرائز دے دیا

بریکنگ نیوز: منہ میں کچھ دل میں کچھ اور ۔۔۔۔!!! ترکی نے اسرائیل کے معاملے پر امت مسلمہ اور دنیا کو تہلکہ خیز سرپرائز دے دیا

انقرہ (ویب ڈیسک) اسلامی ممالک کا اسرائیل کو تسلیم کرنے اور تعلقات بہتر کرنے کا سلسلہ جاری ہے ، بھوٹان کے بعد ترکی نے بھی اسرائیل سے سفارتی تعلق قائم کر لیا ہے ۔ بتایا جا رہا ہے کہ ترکی نے 2 سال کے بعد اسرائیل کے ساتھ اپنے سفارتی تعلقات بحال کرنے کا

اعلان کرتے ہوئے وہاں اپنا سفیر بھی مقرر کردیا ہے ۔ ادھر اسرائیلی حکومت بھی ترکی میں اپنا سفیر بھیجنے پر غور کر رہی ہے ۔ اسرائیل کے ساتھ ترکی کے سفارتی تعلقات 2018کنجی بنو شیبہ کو عطا کی تھی، یہ ایک قبیلہ ہے جن کے پاس پہلے سے یہ کنجی تھی،نبیؐ نے فتح مکہ کے بعد کنجی انہی کو دے دی اور فرما دیا کہ یہ کنجی قیامت تک تمہارے ہی قبیلہ میں رہے گی،یہ تصدیق بھی فرما دی، چنانچہ آج بھی بیت اللہ کی کنجی ان کے پاس ہے، اگر کوئی بادشاہ بھی آتا ہے تو دروازہ کھولنے کے لیے وہی خاندان بنو شیبہ کا بندہ آتا ہے اور وہ کنجی بردار دروازہ کھولتا ہے، تو شاہ رفیع الدینؒ کے ذہن میں خیال آیا کہ یہ خاندان بھی مکہ مکرمہ میں ہی رہے گا، چنانچہ انہوں نے بیت اللہ کی کنجی بردار کے ساتھ دوستی لگائی، واقفیت بنائی، تعارف کیا، ہدیہ تحفہ دیا، بات چیت کی حتیٰ کہ چند دنوں میں آپس میں خوب انسیت اور محبت ہو گئی، جان پہچان ہو گئی،جب جانے کا وقت آ گیا تو اداس دل کے ساتھ جب ان سے ملنے لگے تو ان کا دل بھی اداس تھا کہا کہ اچھا آپ جا رہے ہیں، کوئی کام ہمارے ذمہ ہو تو بتائیے، ہم کیا کر سکتے ہیں؟ توجب انہوں نے یہ کہا تو فرمانے لگے کہ ہاں ایک کام ہے اگر آپ کر دیں تو؟ کون سا؟ وہ کام یہ ہے کہ یہ کچھ پیسے ہیں یہ تو آپ کے لیے ہدیہ ہے اور یہ ایک تلوارہے یہ امانت ہے ، کیا مطلب؟ جیسے چابی تمہارے خاندان میں چلتی رہے گی، یہ تلوار بھی امانت کے طورپر آپ اپنے خاندان کے حوالہ کر دیں، وہ اس تلوار کو بھی محفوظ رکھیں، جب حضرت مہدی آئیں گے اور آپ کے خاندان کا جو شخص ہوگا وہ جیسے ان کے لیے دروازہ کھولے گا میری طرف سے ان کو یہ تلوار کا ہدیہ پیش کر دے گا، اللہ اکبر!دیکھو محبت انسان کی سوچ کو کہاں لے جاتی ہے،یہ فرق ہے ہم میں اوراہل اللہ میں کہ ہم آتے ہیں اور عمرہ کیا اور فارغ، اب بازار ہے اور ہم طوافین اور طوافات ہیں، صبح شام بن داؤد کا طواف ہو رہا ہے اور جواللہ والے ہیں ان کا دل حرم میں اٹکا رہتا ہے۔ یہ ہے شوقِ تلاوت ہمارے قریبی رشتہ داروں میں سے ایک بزرگ تھے، عالم تھے، وہ کہنے لگے،جب میں اپنے حضرت سے بیعت ہواتو انہوں نے مجھے ایک قرآن پاک روزانہ تلاوت کا حکم دیا، خود مجھے فرمانے لگے کہ اس وقت مجھے بیعت ہوئے پینتالیس سال کا عرصہ گزر چکا، ان تینتالیس سالوں میں ایک دن میری تلاوت قضا نہیں ہوئی اگر یہ لوگ ایسے اعمال نامہ لے کر اللہ کے حضور پیش ہوں گے کہ تینتالیس سال میں ایک دن بھی قرآن پاک کا ایک پارہ پڑھنا اس میں ناغہ نہیں ہوا تو پھر سوچیں کہ ہم اس دن کیاکریں گے؟ سے تناؤ کا شکار تھے ۔

Share

About admin

Check Also

ڈالر کی غلامی سے آزادی حاصل کر لی ۔۔۔اب تجارت اور کاروبار میں اپنی کرنسی استعمال کی جائیگی،اہم اور مثالی فیصلہ لے لیاگیا

ڈالر کی غلامی سے آزادی حاصل کر لی ۔۔۔اب تجارت اور کاروبار میں اپنی کرنسی …

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Powered by themekiller.com